اداریہ

اب واک اوٹ کا کیا مطلب؟

ریاست کے سابق وزیراعلیٰ اور پی ڈی پی کے بانی مرحوم مفتی محمد سعید کی طرح وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کو بھی اب اس بات کا احساس ہواہوگا کہ اُن کے پاس بحیثیت حکمران Designationکے سوا کچھ بھی نہیں ہے اور اس Designation کےلئے وہ محض تنخواہ ہی لیتی ہیں ، اس عہدے کےلئے باقی جتنے بھی معاملات ہیں وہ خود مرکزی حکمران نبھاتے ہیں۔ اس بات کا احساس اُنہیں اُس وقت دلایا گیا جب وہ بحیثیت وزیراعلیٰ جموں میں ریاستی کابینہ میٹنگ کی رسمی طور صدارت کر رہی تھی اور پھر بطور احتجاج خود اس میٹنگ سے باہر چلی گئی۔ اس میٹنگ میں اُن کے نائب یعنی نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ نے اُنہیں خاطر میں نہیں لایا۔ یہ اس قسم کا پہلا موقعہ نہیں ہے بلکہ اس سے پہلے بھی حکومت میں ساجھے دار پارٹی بی جے پی لیڈروں نے کئی بار وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کو خاطر میں نہیں لایا اتنا ہی نہیں اس سے قبل بھی اس پارٹی کے عہدیداروں نے وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کے والد مرحوم مفتی محمدسعید کے ساتھ اس طرح کے واقعات انجام دئے، جب وزیراعلیٰ کیDesignationمرحوم مفتی محمد سعید کے پاس تھی تب بھی پارٹی کے لیڈران خاص طور پر نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ اوراُس وقت کے وزیر صحت چودھری لال سنگھ اُنہیں خاطر میں نہیں لاتے،پھر شاید مرحوم مفتی محمد سعید کو بھی احساس ہوگا کہ بی جے پی کے ساتھ اُن کا ہاتھ ملانا صحیح فیصلہ نہ تھا ، جب اُن کی لاڈلی بیٹی اور پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی کو مفتی محمد سعید کی رحلت کے بعد بی جے پی کے ساتھ ناطہ توڑنے کا موقعہ ملا تھا تب انہوں نے حکمرانی کو ترجیح دے کر اسی پاٹی کو پھر سے گلے لگایا ۔جانکار حلقوں کا کہنا ہے کہ مرحوم مفتی محمد سعید اس بات سے پھر واقف ہوئے تھے کہ ریاستی عوام بی جی پی کے ساتھ پی ڈی پی کے اتحاد کرنے میں ناراض تھے تاہم مرحوم بھی ایک غلط فہمی میں ضرور تھے جس کے چلتے مرحوم نے بی جے پی کو ہی حکومت میں شامل کرنے کو ترجیح دی، یہ الگ بات ہے کہ مرحوم بھی اندر سے بی جے پی کے رویے سے خوش نہ تھے، تاہم وقت گزاری کےلئے مرحوم نے بی جے پی کو حکومت میں شامل رکھا، اس دوران کئی حلقوں میں اس بات کا چرچہ تھا کہ مرحوم کو بی جےپی کو حکومت میں شامل کرنے کے لئے پر پچھتاواتھا۔ اب جبکہ آج وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی بھی اس مرحلے سے گذر رہی ہے تاہم ان کو بھی آج پھرسےبی جے پی کے ساتھ حکومت بنانے پر شرمندگی ہوئی ہوگی؟ تاہم ایک حلقہ اس بات سے خفا ہیں کہ اب محبوبہ مفتی کا میٹنگ سے واک اوٹ کرنے کا کیا مطلب؟