نقطہ نظر کالم کی خبریں

ایک چھوٹی سی لیکن ہنگامہ خیز خبر

21 Nov 2020 کو شائع کیا گیا

مظفر حسین بیگ صاحب پی ڈی پی سے مستفعی،،،ایک چھوٹی سی لیکن ہنگامہ خیز خبر ہے ، مظفر صاحب کا اس پارٹی سے مستفعی ہونا سیاسی پنڈتوں کے لئے اچھنبے کی ہی بات ہوسکتی ہے ، ، ،ایک اور اہم بات انہوں نے یہ بھی کی کہ پی ڈی پی نے اس کے ساتھ مشورہ نہیں کیا ، جس سے پارٹی کو نقصان پہنچ چکا ہے اور یہ بھی کہ پی ڈی پی بنیادی اصولوں سے ہٹ کر (پاور ) کے لئے لوگوں کے مستقبل سے کھیل مزیدپڑھیں

لوح بھی تو قلم بھی تو تیرا وجود الکتاب

02 Nov 2020 کو شائع کیا گیا

ھر ایک بار فرانسیسی سرکار نے اپنے تعاون اور اشتراک سے رسول مقبول ﷺ کی شان ِ اقدس میں گستاخی کا منصوبہ بنایا اور اس پر عمل پیرا ہوکر مسلم دنیا اور کروڑوں مسلمانوں کے جگر کو چیر کر رکھ دیا ، لیکن سوال یہ ہے کہ کیا ایسا پہلی بار ہورہا ہے َ اس کا جواب یہی ہے کہ عصری دور میں جب آپ تھوڑا سا ماضی میں جھانکیں گے اورتھوڑا سا حافظے پر زور دیں گے تو آپ کو یاد آئے گا کہ مزیدپڑھیں

محبوبہ جی اور گپکاربیٹھک ۔۔ اہداف کیا ہوں ؟

19 Oct 2020 کو شائع کیا گیا

آخر اب محبوبہ مفتی بھی ۱۴ ماہ کی مدت کے بعد رہا ہوئی ہیں،( مبارک کہہ نہیں سکتا میرا دل کانپ جاتا ہے ) یہ تو آپ کو یاد ہی ہوگا کہ عمر اور فاروق باپ بیٹے پہلے ہی رہا ہوچکے تھے اور انہوں نے اپنے سیاسی میدان کو نئے سرے سے ہموار کرنے کی راہیں اس اعلامئے سے کی تھیں جس سے اب عرف عام میں ’’گپکار اعلامیہ ‘‘سے موسوم کیا جاتا ہے اور اس منڈلی میں وہ سب لوگ ، وہ سبھی پارٹیاں موجود تھیں مزیدپڑھیں

کشمیر ،نئے سیاسی راستوں کی تلاش ناگزیر

14 Sep 2020 کو شائع کیا گیا

’اپنی پارٹی ‘‘کے صد الطاف بخاری نے کہا ہے کہ کشمیر نے جو کھویا ہے ، اس سے کوئی اعلامیہ واپس نہیں لاسکتا صرف سپریم کورٹ یا خود مرکزی سرکار ہی اس سے واپس بخش سکتی ہے ، ہمارا ایجنڈا یہی ہے کہ اس کی واپسی ہو ، ہماری ترجیحات میں بیروز گاری اور نوجوانوں کا مستقبل ہے اور یہ کہ ہم جموں و کشمیر کے عوام کو بھی قریب لانا چاہتے ہیں جن کے درمیان واضح دوریاں پیدا ہوچکی مزیدپڑھیں

ڈاکٹر فاروق نے بھی آخر زباں کھول دی

29 Aug 2020 کو شائع کیا گیا

اس سے پہلے کہ اصل موضوع پر آجاؤں ایک چھوٹی سی ، مختصر سی، کشمیری شودوں (چرسیوں) کی کہانی ذہن کے پردوں پر رقص کرنے لگی ہے سو چا کہ آپ کو بھی اس کہانی سے لطف اندوز کردوں ،، لیکن مشکل یہ ہے کہ اس فوک کہانی جو کہ کشمیری زباں میں بار بار دہرائی جاتی ہے ، کا اُردو یا کسی اور زباں میں وہ مزا نہیں، بہر حال ،، مجبوری ہے۔ کوشش ہی کرسکتا ہوں ، اس لئے عرض ہے کہ آپ کہانی مزیدپڑھیں

کشمیر ایک اور صحرا نوردی کی طرف

24 Aug 2020 کو شائع کیا گیا

رشید پروین ؔ سوپور
بڑی مدت ،دراصل ۵ ؍اگست ریاست کو یوٹی کا درجہ عطا کرنے کے بعد ہمارے سابقہ چیف منسٹر عمر عبداللہ نے اپنی زباں کے تالے کھولے ہیں ، عمر بھی کئی مہینوں تک قید تھے اور اب رہائی کے دن گذار رہے ہیں لیکن اب تک وہ خاموش رہے ، بالکل خاموش ، جس طرح کشمیری عوام نے اپنی پر اسرار خاموشی کو نہیں توڑا۔۔ کیا یہ واقعی پراسرار خاموشی ہے ،، مزیدپڑھیں

چین اوربھارت کے سرحدی تنازع میں تبت کا کیا کردار ہے؟

27 Jun 2020 کو شائع کیا گیا

چین اوربھارتی فوج کے درمیان لداخ میں 15 جون کو ہونے والے تصادم سے قبل سنہ 2017 میں بھی دونوں جوہری طاقتوں کی مسلح افواج ڈوکلام کے علاقے میں ایک دوسرے کے آمنے سامنے آگئی تھیں۔چین اور انڈیا کے درمیان تنازع مغرب میں لداخ سے لے مشرق کی طرف ڈوکلام، نتھولہ اور ریاست اروناچل پردیش کی وادی توانگ تک پھیلا ہوا ہے۔ چین ہمیشہ ہی اروناچل پردیش کے توانگ علاقے پر نظر رکھے ہوئے ہے اور اسے متنازع علاقہ قرار دیتا ہے۔چین توانگ کو تبت کا مزیدپڑھیں

نسل پرستی ‘ مغرب اورہم

21 Jun 2020 کو شائع کیا گیا

نسل پرستی کی وہ چنگاری جو دہائیوں سے امریکی آئین کی برابری اور برادری کی گارنٹیوں کی راکھ تلے سلگ رہی تھی؛ بلآخر شعلہ بن کر بھڑک اٹھی اور نا صرف امریکا کلر بلائنڈ ہے ‘‘ جیسے خوشنما نعروں کے حسن کو گہنا دیا‘ بلکہ زندگی ‘ آزادی اور خوشی کے حصول جیسے اعلیٰ مقاصدکو بھی بے یقینی کی گمنام وادیوں کی نذرکر دیا۔ جارج فلائیڈ کے بے رحمانہ قتل سے کم از کم وقتی طور پر سہی ‘ یہ تاثر مضبوط ہوا ہے کہ امریکی آئین کی لاکھ گارنٹیوں اور امریکا کلر بلائنڈ‘‘ مزیدپڑھیں

ٍٍکشمیر مسئلے پر مذاکرات کی بحالی کےلئے عمران کی پیشکش / یوم پاکستان پر نریندرمودی کی پاکستانی عوام کو مبارک بادی کا پیغام

23 Mar 2019 کو شائع کیا گیا

جنگی صورتحال کے بیچ ہندوپاک کے درمیان سفارتی سطح پر اس وقت یخ ٹوٹ گئی جب بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے یوم پاکستان کے موقعے پر پاکستانی قوم اور وزیراعظم کے نام مبارک بادی کا پیغام دیا اور مشترکہ طور پر جمہوری طور پر ترقی یافتہ خطہ بنانے کی تجویز پیش کی جس کا خیر مقدم مزیدپڑھیں

ہند پاک کشید گی میں کمی کیا جنگ کا خطرہ ٹل گیا ؟

10 Mar 2019 کو شائع کیا گیا

شیخ تجمل
لیتہ پورہ پلوامہ میں جنگجوئوں کی جانب سے نیم فوجی فورس سی آر پی ایف کی ایک کانوائے کو نشانہ بنا کر کئے گئے فدائین حملے کے بعد بھارت اور پاکستا ن کے مابین تعلقات میں پیدا ہونے والی کشیدگی اور پھر پاکستان کے بالاکوٹ علاقہ میں بھارتی فضائیہ کی جانب سے جیش محمد کے مبینہ تربیتی کیمپ پر کئے گئے حملوں اور اس کے جواب میں پاکستان کی جانب سے بھارتی فضائی حدود کی خلاف ورزی اور پھر بھارتی فضائیہ کے ایک مزیدپڑھیں