مضامین

افغانستان امن کیلئے پاکستان کا تعاون چاہتا ہے

افغانستان امن کیلئے پاکستان کا تعاون چاہتا ہے

افغانستان کے مضبوط صدارتی امیدوار عبداللہ عبداللہ نے کہا ہے کہ پاکستان اور افغانستان ایک جیسے چیلنجوں کا سامنا ہے، دونوں کے مفاد میں ہے کہ اچھے پڑوسیوں کی طرح چیلنجز کا مقابلہ کریں۔ امریکی تھنک ٹینک اٹلانٹک کونسل سے بات چیت میں عبداللہ عبداللہ کا کہنا تھا کہ پاکستان کیساتھ اچھے ہمسایہ ملک کے جذبے کے تحت تعلقات چاہتے ہیں، پاکستان کو بھی حملوں کا سامنا ہے، دونوں ممالک کو اچھے ہمسایہ ممالک کے جذبے کیساتھ مسئلے سے نمٹنا چاہیے۔ افغانستان میں قیام امن کے لیے اسلام آباد حکومت کا تعاون چاہتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا \’آج کی سخت حقیقت یہی ہے کہ دونوں ممالک کو ایک جیسے چیلنجز کا سامنا ہے اور یہ دونوں ممالک کے حق میں ہے کہ وہ اچھی ہمسائیگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ان مسائل کا مل کر مقابلہ کریں۔ واضح رہے کہ 1996 تا 2001 تک پاکستان افغانستان میں طالبان کا سب سے بڑا حامی رہا، تاہم امریکہ میں ۱۱ ستمبر کے حملوں کے بعد اسلام آباد حکومت نے یوٹرن لیتے ہوئے طالبان کے خلاف راہ اپنائی۔ لیکن کابل حکومت تواتر کے ساتھ یہ الزامات عائد کرتی آئی ہے کہ پاکستانی فوج اور خفیہ ایجنسی اور طالبان کے درمیان روابط اب بھی پائے جاتے ہیں اور افغانستان میں قیام امن کے لیے اسلام آباد حکومت طالبان پر اپنا اثر و رسوخ استعمال کر سکتی ہے۔ اسلام آباد حکومت افغانستان کے ان دعوؤں کو مسترد کرتی آئی ہے۔