خبریں

بجلی اور مہنگی پڑے گی

بجلی اور مہنگی پڑے گی

محکمہ بجلی نے ریاستی اور مرکزی محکموں کو چھوڑ کر اگلے مالی سال سے تمام زمروں کے صارفین کی بجلی فیس میں بھاری اضافے کا منصوبہ الیکٹرسٹی ریگولیٹری کمیشن کو پیش کردیا ہے جس کے تحت غریبی کی سطح سے نیچے گزر بسر کرنے والے صارفین کے ساتھ ساتھ زرعی شعبے کیلئے بھی بجلی کی قیمتیں بڑھانے کی تجویز ہے۔اس معاملے پر26اور29اکتوبر کو کمیشن کی میٹنگوں میں حتمی فیصلہ لیا جائے گا اور منصوبہ منظور ہونے کی صورت میں صارفین کو اپریل کے مہینے سے بجلی اورمہنگی پڑے گی۔کشمیر میڈیا نیٹ ورک کے مطابق پائور ڈیولپمنٹ ڈیپارٹمنٹ(پی ڈی ڈی ) نے سال 2016-17سے2020-21تک محکمہ کی سالانہ مالی ضروریات سے متعلق پٹیشن جموں اینڈ کشمیر سٹیٹ الیکٹرسٹی ریگولیٹری کمیشن(JKSERC)کو پیش کردی ہے جس میں آمدن اور خرچہ جات میں بھاری تفاوت کو کچھ حد تک کم کرنے کیلئے بجلی فیس میں اضافے کی تجویز رکھی گئی ہے۔محکمہ پی ڈی ڈی کا کہنا ہے کہ بجلی فیس کے بطور حاصل ہونے والی آمدن کے مقابلے میں محکمہ کوہر سال کئی ہزارکروڑ روپے کے خسارے سے دوچار ہونا پڑتا ہے۔ پٹیشن میں 2016-17مالی سال سے ایسے بی پی ایل صارفین کیلئے فی یونٹ بجلی کی قیمت1.19روپے سے بڑھاکر 1.35روپے کرنے کی تجویز شامل ہے جو ایک ماہ میں 30یونٹ تک بجلی خرچ کرتے ہیں۔فی الوقت عام زمرے کے تحت صارفین سے ماہانہ100یونٹ تک کی بجلی کی قیمت1.54روپے فی یونٹ،101سے200یونٹ تک2روپے فی یونٹ،201سے400یونٹ تک 3روپے فی یونٹ اور400یونٹ سے زیادہ بجلی کیلئے 3.2روپے فی یونٹ کے حساب سے فیس وصول کی جاتی ہے۔تاہم پی ڈی ڈی نے جو منصوبہ پیش کیا ہے، اس کے تحت پہلے100یونٹ تک کم قیمتوں کی رعایت ختم کرتے ہوئے ماہانہ 200یونٹ تک کی بجلی کیلئے2.27روپے فی یونٹ،201سے400یونٹ تک3.41روپے فی یونٹ ،401سے800یونٹ تک 3.64روپے فی یونٹ جبکہ800یونٹ سے زیادہ بجلی کے استعمال کی قیمت 4.20روپے فی یونٹ مقرر کرنے کی تجویز رکھی گئی ہے۔ پٹیشن میں میٹر والے علاقوں کے صارفین کے ساتھ ساتھ بغیر میٹر علاقوں میں رہنے والے صارفین کی ماہانہ بجلی فیس میں اضافے کی سفارش کی گئی ہے۔ذرائع سے کے ا یم این کو معلوم ہوا ہے کہ نئی قیمتوں کے تحت بغیر میٹر صارفین کو ماہانہ1/2کلوواٹ بجلی کیلئے 335روپے ادا کرنے پڑیں گے جس کیلئے وہ فی الوقت1/4کلوواٹ تک 89روپے جبکہ1/4کلوواٹ سے1/2کلوواٹ کیلئے295روپے فی ماہ ادا کرتے ہیں۔اسی طرح 1/2کلوواٹ سے 1کلوواٹ ماہانہ بجلی کی قیمت بڑھاکر664روپے کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔فی الوقت اس کی قیمت 1/2کلوواٹ سے3/4کلوواٹ تک 445روپے فی ماہ اور 3/4کلوواٹ سے1کلوواٹ تک585روپے فی ماہ ہے۔ذرائع کے مطابق جہاں تک غیر گھریلو یا کمرشل صارفین (سنگل فیز)کا تعلق ہے ، اِس وقت ان سے 100یونٹ بجلی ماہانہ تک 2.55روپے فی یونٹ،101سے200یونٹ تک 2.70روپے فی یونٹ،201سے 300یونٹ تک 3.9روپے فی یونٹ اور300یونٹ سے زیادہ بجلی کیلئے4.2روپے فی یونٹ کے حساب سے فیس وصول کی جاتی ہے۔تاہم نئے منصوبے کے تحت ایسے صارفین کیلئے ماہانہ100یونٹ بجلی کیلئے 2.9روپے فی یونٹ،101سے300یونٹ تک 4.44روپے فی یونٹ جبکہ300یونٹ سے زیادہ بجلی کیلئے 4.78روپے فی یونٹ مقرر کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔