خبریں

جموں وکشمیر میں صنعتی یونٹ ،تعلیمی ادارہ یااسپتال کھولنے کے لئے سرکار زمین دےگی/ لیفٹیننٹ گورنر

جموں وکشمیر میں صنعتی یونٹ ،تعلیمی ادارہ یااسپتال کھولنے کے لئے سرکار زمین دےگی/ لیفٹیننٹ گورنر

جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے” کشمیرمیںجمعہ پتھربازی کوقصہ پارینہ“قراردیتے ہوئے کہاہے کہ دفعہ370کی منسوخی کے بعدجموں وکشمیرمیں مثبت تبدیلیاں آئی ہیں ۔منوج سنہا نے آرٹیکل370 کے خاتمے کے بعد کشمیری نوجوانوں کے عسکریت پسندی کی طرف راغب ہونے کی خبروں کو مسترد کرتے ہوئے کہاکہ یہ تشخیص غلط ہے۔ ایک وقت تھا جب ہر جمعہ کوکوئی بھی شخص صرف پتھر مارنے والے کو دیکھ سکتا تھا۔ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ کشمیر بدل رہاہے اوراب یہاں عام لوگوں کی شکایات سنجیدگی سے سنی جاتی ہیں ۔انہوں نے بے روزگاری کی شرح میں پچاس فیصد کمی آنے کادعویٰ کرتے ہوئے کہاکہ سرمایہ کار20ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کیساتھ قطارمیں کھڑے ہیں۔
جموں و کشمیر کےلیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے میڈیا ادارے ’ دی پرنٹ‘ کو دیئے گئے ایک انٹرویو میںکہاکہ 2سال قبل دفعہ 370کی منسوخی کے بعدجموں وکشمیرمیں مثبت تبدیلیاں آئی ہیں لیکن بقول موصوف کچھ لوگ یہ تبدیلی نہیں دیکھیں گے کیونکہ یہ ان کے مطابق نہیں ہے۔ لیکن یہ عوام الناس کے مطابق ہے۔انہوں نے کہاکہ جموںوکشمیرکے لوگ2 سال پہلے ناراض تھے۔ کچھ لوگ (سیاستدان) پھر بھی ناراض ہوسکتے ہیں لیکن عام لوگ نہیں ۔لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہاکہ یہ ایک نیا جموں و کشمیر ہے۔انہوں نے کہا کہ لوگوں کی شکایات سنجیدگی کے ساتھ سنی اور سنائی دی جارہی ہیں، اور ان کے ماتحت حکومت نے ’بدعنوانی سے پاک انتظامیہ کی فراہمی میں معنی خیز کام‘ کئے ہیں۔لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا کاکہناتھاکہ وہ دن گزر گئے جب انتظامی منظوری یا ٹینڈرنگ کے بغیر معاملات ہوتے۔ اب اگر کام کی منظوری دی جاتی ہے تو ، اس میں انتظامی منظوری ، مالی منظوری ، ٹینڈرنگ ، جیوٹیگنگ ، جسمانی توثیق ہوگی اور اس کے بعد ہی رقم دی جائے گی۔انہوں نے کہاکہ سرمایہ کار20ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کیساتھ قطارمیں کھڑے ہیں ۔منوج سنہا نے مزیدکہاکہ جموں وکشمیرمیں بے روزگاری کی شرح ایک سال میں آدھی رہ گئی ہے۔
لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے آرٹیکل370 کے خاتمے کے بعد کشمیری نوجوانوں کے ملی ٹنسی کی طرف راغب ہونے کی خبروں کو مسترد کرتے ہوئے کہاکہ یہ تشخیص غلط ہے۔انہوں نے کہاکہ ایک وقت تھا جب ہر جمعہ کو کوئی صرف پتھر مارنے والے کو دیکھ سکتے تھے لیکن یہ اب کی تاریخ ہے۔ منوج سنہانے دعویٰ کیاکہ جنگجو گروپوں کے ذریعہ مقامی بھرتی نیچے آگئی ہے۔ لوگوں میں جو خوف تھا ،اس کا احساس ختم ہوگیا۔ ملک بھر سے سیاحوں کی سب سے بڑی تعداد صرف کشمیر آرہی ہے۔ آپ کو یہاں ہوٹلوں میں کمرے نہیں ملیں گے، یہ بہتر حالت کا ایک اشارہ ہے۔لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ اب سیکورٹی فورسزکومکمل بالادستی حاصل ہے اورگزشتہ پندرہ دنوں کے دوران 70جنگجو مارے گئے۔لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ حکومت ہند نے کشمیری پنڈتوں کی بحالی کےلئے 6000 ملازمتوں اور6000 مکانات کا پیکیج دیا تھا۔انہوں نے کہاکہ مجھے ایک جائزے میں پتا چلا ہے کہ کشمیری پنڈتوں کو کسی نہ کسی بہانے ملازمت نہیں دی گئی تھی۔ میں آج آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ ان میں سے تقریبا 4000 افراد کو ملازمتیں مل چکی ہیں اور باقی افرادکو اگلے تین چار مہینوں میں ملازمتیں مل جائیں گی۔انہوں نے ساتھ ہی کہاکہ رہائش کے معاملے میں8001 مکانات زیر تعمیر ہیں اور اگلے 6سے8 ماہ میں مکمل ہوجائیں گے۔ باقی مکانات کےلئے ، زمین کی نشاندہی کی جاچکی ہے اور ٹینڈر / ڈی پی آر کا عمل جاری ہے۔ اگلے 2سالوں میں ، تمام مکانات تعمیر کئے جائیں گے۔ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ اس کے علاوہ ، ہم نے بازآبادکاری کی پالیسی بھی بنائی ہے لیکن ایک بار جب یہ زمین پر آجائے تو میں اس پر بات کروں گا۔سیاسی جماعتوں کے ذریعہ ریاستی درجے کی بحالی کے مطالبے اور حدبندی کمیشن کے بارے میں ان کے خدشات کے بارے میں ،لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ تاریخ کے بارے میں فیصلہ کرنا ان کے بس کی بات نہیں ہے۔انہوں نے کہاکہ ریاستی درجے کی بحالی اوراسمبلی انتخابات کافیصلہ ہندوستان کی پارلیمنٹ کو کرنا ہے ، جس کا وزیر اعظم نریندر مودی نے لال قلعہ کے اطراف سے اپنی تقریر میں ، اور انتخابی کمیشن کےلئے حد بندی کمیشن کی رپورٹ کے بعد انتخابات کے بارے میں فیصلہ کرنے کا عہد کیا تھا۔ منوج سنہانے اب کشمیریوں کی اراضی پر قبضہ کرنے والے بیرونی لوگوں کے بارے میں خدشات بھی زیادہ نہیں۔انہوں نے کہاکہ مجھے نہیں لگتا کہ عام لوگ اس (ڈومیسائل قوانین) سے پریشان ہیں۔ کچھ لوگوں کو اس طرح کے خدشات ہوتے ہیں۔ وہ لوگوں کو اُکسا کر حالات کو خراب کرنا چاہتے ہیں۔ لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے کہا کہ میں عوام کو پوری ذمہ داری کے ساتھ بتانا چاہتا ہوں،کیا جموں و کشمیر سے باہرکا کوئی یہاں ایک انچ زمین بھی قبضہ کرنے میں کامیاب رہا ہے؟ اس کا ایک بھی ثبوت نہیں ہوگا۔ یہ بے بنیاد چیزیں ہیں۔منوج سنہاکاکہناتھاکہ اگر کوئی صنعت قائم کرنا چاہتا ہے تو ہم زمین دیں گے۔ اگر کوئی تعلیمی ادارہ کھولنا چاہتا ہے تو ہم زمین دیں گے۔ اگر کوئی اچھا ہسپتال کھولنا چاہتا ہے تو اسے زمین مل جائے گی۔