مضامین

دلخراش واقعات پر کا ردعمل

دلخراش واقعات پر کا ردعمل

حریت (گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے سوپور، ہندوارہ اور بارہمولہ کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے قوم سے دردمندانہ اپیل کہ ہے کہ وہ فوراً تناو کو ختم کرکے آپس میں شیروشکر ہوکر بھارت کی غلامی کے خلاف کمر بستہ ہوجائیں۔ انہوں نے کہا کہ بارہمولہ اور سوپور میں کچھ نوجوانوں نے غلط حرکات کا ارتکاب کرکے آپسی بھائی چارے کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی ہے وہ ہمارے لئے انتہائی دلخراش واقعہ ہے اور اسطرح کے غلط اقدامات اور حرکات ہماری خون سے سینچی ہوئی تحریک اور ہمارے دین وایمان کے منافی ہیں۔ ایسے واقعات دہرانے سے بھارتی ایجنسیوں کے ’’لڑاو اور حکومت کرو‘‘ منصوبوں کو تقویت ملتی ہے۔ ہماری قوم مجموعی حیثیت سے تحریک نواز اور آزادی پسند قوم ہے۔ 98فیصد لوگ تحریک آزادی کے ساتھ جٹے ہوئے ہیں اور نام نہاد الیکشن کے موقع پر ہماری قوم نے مکمل بائیکاٹ کرکے ایک ایسی جاندار اور شاندار تاریخ رقم کی، جس پر ہمیں آپ کا شکر بجالانا چاہیے۔ بھارت اور اس کی ایجنسیاں ظلم وجبر، تشدد، قتل وغارت اور بربریت کے باوجود لوگوں کو ووٹ ڈلوانے میں ناکام رہ کر بوکھلاہٹ کا شکار ہیں اور بھارت ہماری قوم کا مقابلہ کرنے میں ہر محاذ پر ناکام رہا ہے۔ اب بھارت کشمیریوں کو مختلف ذاتوں، پارٹیوں اور علاقائی اور مسلکوں کے نام پر لڑانے کی ہر ممکن کوشش کرتا ہے، لیکن ہمارے جوانوں کی سیاسی شعور کی پختگی کی وجہ سے ان محاذوں پر بھارت اس کی فوج، ایجنسیوں اور پولیس کو شکست فاش سے دوچار ہونا ہوگا۔ گیلانی نے کہا کہ ووٹنگ کا مرحلہ ختم ہوا۔ قوم نے مثالی بائیکاٹ کرکے شہداء کے خون کی لاج رکھی۔ اب چند ہزار گنے چْنے ووٹروں نے ووٹ ڈالا۔ کس نے ڈالا کس کو ڈالا ہمارے لئے اب کوئی مسئلہ نہیں ہے اور اس کے خلاف کسی ردعمل کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ ہماری قوم اور ہمارے نوجوانوں کو ہوشیار رہنا چاہیے کہ بھارت اور اس کی ایجنسیاں یہاں انتہائی گھناونا رول ادا کررہی ہیں۔گیلانی نے سوپور اور بارہمولہ واقعہ کے خلاف ہندوارہ میں ردعمل سامنے آنے کو بھی تکلیف دہ قرار دیا کہ وہاں سوپور کے دکانداروں کو دکان بند کرنے اور ہندوارہ سے چلے جانے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔ ایسا ردعمل کسی بھی صورت میں مہذب اور مظلوم قوم کو زیب نہیں دیتا ہے۔ گیلانی نے ہندوارہ، کپوارہ، سوپور اور بارہ مولہ کے عوام سے دردمندانہ اپیل کی کہ تناو، کچاو اور آپسی ٹکراو کی اس تکلیف دہ صورت کو فوری طور بند کرکے بھائی چارہ قائم کیا جائے اور ہم بحیثیت کلمہ گو مسلمان بھائی ہیں۔