اداریہ

دورہ پاکستان فی الحال نہیں

وزیراعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ نے کہا ہے کہ فی الحال وہ پاکستان کا دورہ نہیں کر رہے ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان اچھے تعلقات چاہتے ہیں اور ہم اس وعدے پر قائم ہیں کہ دونوں ممالک کے درمیان تمام مسائل پرامن طریقہ سے حل ہوں۔ وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان کے متوقع اگلے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے جو باتیں کہی ہیں اْن سے رشتے مزید بہتر ہونے کی توقع ہے۔ڈاکٹر من موہن سنگھ نے یہ بات جاپان اور تھائی لینڈ کے دورے سے واپسی کے بعد جمعہ کو دہلی میں نامہ نگاروں سے گفتگو کے دوران کہی۔ایک سوال کے جواب میں منموہن سنگھ نے کہا کہ جب پاکستان میں انتخابات کے نتائج آرہے تھے تب انہوں نے نواز شریف کو فون کرکے مبارکباد دی تھی۔انہوں نے کہا کہ میں نے نواز شریف کو بھارت آنے کی دعوت دی اور انہوں نے بھی مجھے پاکستان کا دورہ کرنے کو کہا۔وزیراعظم نے واضح کیا کہ دونوں جانب سے ابھی اس پر کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی اس بارے میں کوئی تاریخ مقرر ہوئی ہے۔ لیکن ہم ضرور چاہیں گے کہ پڑوسی کی حیثیت سے پاکستان کے ساتھ اچھے رشتے ہوں۔ڈاکٹر منموہن سنگھ نے کہا کہ ان کی مستقل کوشش رہی ہے کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان تمام مسائل حل ہونے چاہیں۔
وزیر اعظم ڈاکٹر منموہن سنگھ نے کہا ہے کہ پاکستان کے وزیراعظم منتخب اور پاکستان مسلم لیگ(ن) کے سربراہ میاں نواز شریف کی جانب سے مثبت اشارے مل رہے ہیں اور توقع ہے کہ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تعلقات میں سدھار آئے گا۔ نئی دہلی میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے ڈاکٹر سنگھ نے کہا کہ ان کی حکومت پاکستان کے ساتھ خوشگوار تعلقات کے حق میں ہے اور امید ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان معرض التوا میں پڑے معاملات پرامن طریقہ سے طے پا جائیں گے۔ہندوستانی وزیر اعظم نے مزید کہا کہ ہندوستان پاکستان کے ساتھ تمام معاملات پر امن طریقہ سے سلجھانا چاہتا ہے اور نواز شریف نے بھی اسی قسم کا عندیہ ظاہر کیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ انہوں نے نواز شریف کو دورہ ہند کی دعوت دی ہے اور ادھر نواز شریف بھی انہیں مدعو کر چکے ہیں۔ انہوں نے میڈیا کو بتایا کہ انہیں حکومت پاکستان کی جانب سے دورہ پاکستان کی دعوت ملی ہے لیکن ابھی اس سلسلہ میں کوئی قطعی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے اور نہ ہی دورہ پاکستان کی کوئی تاریخ طے کی گئی ہے