سرورق مضمون

دہلی عام آدمی پارٹی کے حوالے / کیجروال کی سونامی نے مودی ویو ختم کی/ کانگریس کا صفایا،بی جے پی کو شرمناک شکست

دہلی عام آدمی پارٹی کے حوالے / کیجروال کی سونامی نے مودی ویو ختم کی/ کانگریس کا صفایا،بی جے پی کو شرمناک شکست

ڈیسک رپورٹ/
10 اپریل کو دہلی میں ہوئے اسمبلی انتخابات کے نتائج نے سب کو حیران کردیا ۔ انتخابی نتائج توقع کے خلاف تھے ۔ 70 انتخابی حلقوں میں سے عام آدمی پارٹی نے 67 حلقوں پر کامیابی حاصل کی ، بی جے پی کو 3 سیٹیں ملیں جبکہ کانگریس ایک بھی سیٹ حاصل کرنے میں ناکام رہی ۔ دہلی انتخابات میں کسی ایک پارٹی کی اتنی سیٹوں پر کامیابی تاریخی کامیابی قرار دی جارہی ہے ۔ اس سے پہلے اندرا گاندھی کی ہلاکت کے بعد راجیو گاندھی کی قیادت میں ہوئے انتخابات میں کانگریس کو 52 نشستیں ملی تھیں۔ کانگریس پچھلے پندرہ سالوں سے دہلی پر حکومت کررہی ہے۔ لیکن آج کے انتخابات میں اس جماعت کو ایک بھی نشست نہ مل سکی۔ اس طرح سے پارٹی کا دہلی میں صفایا ہوگیا۔ اسی طرح بی جے پی کو بھی سخت شکست سے دوچار ہونا پڑا۔ پارلیمانی انتخابات میں بی جے پی نے دہلی کی تمام سات نشستوں پر کامیابی حاصل کی تھی۔ اس کا خیال تھا کہ آج یہ سب سے بڑی پارٹی کے روپ میں ابھر آئے گی۔ لیکن ایسا نہ ہوا اور اس کومشکل سے تین سیٹیں ملیں ۔پچھلے اسمبلی انتخابات میں کانگریس کو آٹھ نشستیں ملی تھیں لیکن آج وہ یہ آٹھ نشستیں بھی کھو گئی۔ اسی طرح بی جے پی کو پچھلے انتخابات میں انتیس سیٹیں ملی تھیں۔ لیکن اب کی بار اس پارٹی نے مشکل سے تین نشستیں حاصل کی ہیں جو اس پارٹی کے لئے بہت بڑا دھچکا ہے۔
عام آدمی پارٹی کی اس جیت پر نہ صرف دہلی بلکہ پورے ملک میں جشن منایا گیا۔ تمام چھوٹے بڑے سیاسی لیڈروں نے کیجریوال کو اس کامیابی پر مبارک باد دی ۔ وزیراعظم مودی نے الیکشن نتائج آتے ہی صبح سویرے کیجریوال کو فون پر کامیابی کے لئے مبارک باد دی ۔ اس نے فون پر یقین دلایا کہ دہلی حکومت کے ساتھ پورا تعاون کیا جائے گا اور تمام مدد فراہم کی جائے گی ۔ کانگریس نے بھی اپنی شکست تسلیم کی۔ ملک کے کئی شہروں سے دہلی کے نتائج آتے ہی جشن منایا گیا۔ اس سے اندازہ لگایا جاتا ہے کہ لوگ کیجریوال کی اس کامیابی پر بہت ہی خوش ہیں۔ پارلیمانی انتخابات کے علاوہ کئی ریاستوں میں بی جے پی نے جو کامیابی حاصل کی تھی اس وجہ سے پارٹی گھمنڈ کی شکار ہوگئی تھی۔ اس نے کئی ایسے پروگرام چلانے شروع کئے جن سے پورے ملک کے عوام پریشان ہوگئے تھے۔ خاص کر گھر واپسی کے ان کے پروگراموں نے ملک اور ملک سے باہر لوگوں کو پریشان کیا تھا۔ مودی لہر کہ وجہ سے بی جے پی کہیں رکنے کا نام نہیں لے رہی تھی۔ کیجریوال نے یہ تمام خدشے دور کرکے پارٹی کو بھاری شکست سے دوچار کیا۔ نو مہینے بھی نہیں گزرے کی عام آدمی پارٹی نے بی جے پی کو سخت مشکلات سے دوچار کیا۔ اب جبکہ دہلی پر عام آدمی کا جھنڈا لہرا رہاہے دیکھنا یہ ہے کہ نئی حکومت عوام سے کئے گئے وعدے کہاں تک پوراے کرنے میں کامیاب ہوگی۔ عام آدمی پارٹی نے عوام کو مفت پانی ، نصف قیمت پر بجلی اور رشوت ستانی کا خاتمہ کرنے کا وعدہ کیا ہے ۔ لوگ اس بات کا انتظار کررہے ہیں کہ انہیں جلد از جلد راحت مل جائے ۔
بی جے پی کی شرمناک شکست میں سب سے زیادہ پریشان پارٹی کی طرف مشتہر کی گئی وزیراعلیٰ کنڈیڈیٹ کرن بیدی ہیں۔ بیدی پچھلے انتخاب میں عام آدمی پارٹی کے ساتھ تھی اور اچانک انتخاب سے کچھ دن پہلے بی جے پی میں آگئی۔ یہاں بیدی وزارت اعلیٰ کی نامزد امیدوار تھی۔ لیکن ایک معمولی مدمقابل سے دو ہزار سے زائد ووٹوں سے الیکشن ہار گئی۔ کانگریس نے جو ستر امیدوار کھڑا کئے تھے وہ سب الیکشن ہار گئے۔ ان میں سے 63 امیدواروں کی ضمانتیں ضبط ہوگئیں ۔ پارٹی کا وزیراعلیٰ کنڈیڈیٹ اجیت ماکن بھی بری طرح سے لڑھک گیا۔ اسی طرح صدر مملکت کی بیٹی بھی الیکشن ہار گئی ۔ ماکن اور لولی سنگھ نے شکست کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے پارٹی عہدوں سے دستبردار ہونے کا اعلان کیا ہے ۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ کیجریوال نے بی جے پی کے خلاف مہم کی بنیاد ڈالی ہے۔ اس سے بی جے پی مخالفین کو حوصلہ ملا ہے۔ اس وجہ سے آگے بی جے پی کے لئے مزید مشکلات کا آغاز ہوگا