خبریں

ریاست کی سیکورٹی صورتحال میں بہتری

مرکزی وزیر داخلہ سشیل کمار شنڈے نے کہا ہے کہ جموں و کشمیر کی سیکورٹی صورتحال میں نمایاں بہتری آئی ہے۔انہوں نے کہا کہ جہاں گزشتہ ایک برس کے دوران ملی ٹینسی سے جڑے واقعات میں کمی آئی ہے وہیں سیکورٹی فورسز اور شہری ہلاکتوں میں اضافہ ہوا ہے۔ گذشتہ روزمیڈیا سے بات کرتے ہوئے شنڈے نے کہا کہ گزشتہ برس دسمبر میں فوج نے اس وقت بڑی کامیابی حاصل کی جب 14جنگجوؤں کو ماراگیا۔انہوں نے اس ضمن میں تفصیلات بھی فراہم کیں۔انہوں نے مرکز کی جانب سے ریاست میں روزگار کے مواقع پیدا کرنے والی سکیم کے بارے میں کہا ہے کہ وزارت داخلہ نے اڑان سکیم رائج کی ہے جس کے تحت35معروف کارپوریٹ گھرانے نیشنل سکل ڈیولپمنٹ کارپوریشن کے ساتھ شراکت کرکے اگلے پانچ برسوں میں 54ہزار سے زائد نوجوانوں کو ہنر مند بنانے کا بھیڑا اٹھا رکھا ہے۔انہوں نے کہا کہ اڑان کے تحت 382 امیدواروں نے تربیت مکمل کی ہے جن میں سے 185کو نوکریاں بھی ملی ہیں جبکہ دیگر ان کو نوکریاں ملنی باقی ہیں۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ سہ ماہی کے دوران 18کارپوریٹ گھرانوں نے ریاست کے32دورے کئے ہیں جن کے دوران1305نوجوانوں کو تربیت کیلئے منتخب کیاگیا۔وزیر داخلہ نے جموں اور دلّی میں مقیم کشمیری مہاجرین کو ملنے والی نقد امداد میں اضافہ کے بارے میں کہا کہ ماہانہ نقدی امداد1250روپے فی فرد (زیادہ سے زیادہ5ہزار فی کنبہ)سے بڑھا کرماہانہ فی فرد1650روپے(زیادہ سے زیادہ 6600روپے فی کنبہ )کردیا گیا ہے اورنقد امداد میں اضافہ کا فیصلے یکم جولائی2012سے نافذ العمل ہوگا۔