خبریں

سید علی گیلانی بلڈ بینک قائم سینکڑوں نوجوانوں کا رضاکارانہ طور خون کا عطیہ

حریت چیرمین(گ)سید علی گیلانی کی گھر میں مسلسل نظربندی کے بیچ تحریک حریت کے اہتمام سے ’’سید علی گیلانی بلڈ بینک‘‘ کا باضابطہ قیام عمل میں لایا گیا اور خون عطیہ کرنے کے عالمی دن کے موقعے پر حیدرپورہ میں قائم عارضی کیمپ میں سینکڑوں نوجوانوں نے رضاکارانہ طور اپنے خون کا عطیہ پیش کیا۔ افتتاحی تقریب پر مختصر تعارفی تقریر کرتے ہوئے سید علی گیلانی نے اعلان کیا کہ اس بلڈ بینک کی ایک ذیلی شاخ آزاد کشمیر میں بھی قائم کی جارہی ہے اور آئندہ دنوں میں ریاست کے باقی اضلاع میں بھی باری باری خون عطیہ کرنے کے کیمپ لگائے جائیں گے، جن میں سینکڑوں لوگ رضاکارانہ طور اپنا خون پیش کرنے کے خواہشمند ہیں۔ بلڈ بینک قائم کرنے کے اغراض ومقاصد پر روشنی ڈالتے گیلانی نے کہا کہ کشمیر ایک تصادم آرائی والا علاقہ(Conflict Zone)ہے اور یہاں بسا اوقات حالات خراب ہوجاتے ہیں، جن میں مسلح فورسز کی فائرنگ اور ٹائرگیس شلنگ سے سینکڑوں لوگ زخمی ہوجاتے ہیں۔ ان مجروحین کو اس وقت خون کی اشد ضرورت ہوتی ہے اور ہم اس ضرورت کو پورا کرکے ان کے مددگار بننا چاہتے ہیں۔ گیلانی نے کہا کہ بلڈ بینک قائم کرنے کے پیچھے خدمت خلق کا جذبہ بھی کارفرما ہے اور ہم چاہتے ہیں کہ ضرورت کے وقت ان بیمار حاجتمندوں کی بھی خون دے کر مدد کی جائے، جو کسی وجہ سے خود اس کا انتظام کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہوتے ہیں اور جن کو سرجری وغیرہ کے وقت پریشانی درپیش ہوتی ہے۔ اس کام میں ہم مذہب، نسل، قومیت یا علاقائیت کا کوئی امتیاز آڑے نہیں آنے دیں گے اور انسانیت کی بنیاد پر ہر ضرورت مند کی مدد کرنے کی کوشش کی جائے گی۔سید علی گیلانی نے کہا کہ انسانی خدمت کا جذبہ مسلمان کی امتیازی شان ہوتی ہے اور ہماری تنظیم کا جو نصب العین ہے،۔ اس میں خداپرستی اور آخرت پسندی کے ساتھ ساتھ انسان دوستی کو بھی اولیت حاصل ہے۔ بلڈ بینک کا قیام جہاں عظیم تر تحریکی تقاضوں کے پیشِ نظر عمل میں لایا گیا ہے، وہاں یہ اپنی قوم میں سماجی خدمت کا جذبہ پیدا کرنے کی تحریک برپا کرنے کی بھی ایک کوشش ہے۔