مضامین

عوامی رد عمل جائز

عوامی رد عمل جائز

چھتر گام ہلاکتوں کے خلاف عوامی رد عمل جائز ٹھہراتے ہوئے پی ڈی پی سرپرست اعلیٰ مفتی محمد سعید نے وزیر اعظم نریندر مودی پر زور دیا ہے کہ وہ وادی میں حقوق انسانی کے احترام کو یقینی بنانے کے لئے اقدامات کریں۔ ہندوارہ میں عوامی جلسہ ، جس کے دوران پنتھرس پارٹی کے رکن قانون ساز کونسل رفیق حسین شاہ  پارٹی میں شامل ہوئے،سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بے گناہ اور معصوم افراد کی ہلاکت کو کسی بھی زاویہ سے درست قرار نہیں دیا جا سکتا اور اس قسم کے واقعات قیام امن کی کوششوں کیلئے نقصان دہ ثابت ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے یاد دلایا کہ نوے کی دہائی میں بھی اسی قسم کے واقعات کے نتیجہ میں ہی نامساعد حالات پیدا ہوئے تھے،دو دہائی تک قتل و غارت اور خون خرابہ سے جھوجھنے کے بعد ریاستی عوام ایک بار پھر حالات کو خراب ہوتے ہوئے نہیں دیکھنا چاہتے۔مفتی سعید نے کہا کہ اس قسم کے سانحات سے ہونے والے نقصانات کی بھرپائی ناممکن ہے پھر بھی اعلیٰ ترین سطح پر کی جانے والی انضباطی کارروائی سے کسی حد تک لوگوں کا اعتماد بحال کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کو چاہئے کہ وہ اپنے پیش روئوں کے اس مسئلہ کو پر امن طریقہ سے حل کرنے کے عزم کو آگے بڑھائیںاور ریاست میں امن قائم کرنے کیلئے ٹھوس اقدامات کریں۔ انہوں نے کہا کہ اس کے لئے فوج میں تخفیف اور افسپا جیسے قوانین کی منسوخی دائمی امن کیلئے بنیاد بن سکتے ہیں۔ مفتی سعید نے مرکزی سرکار پر زور دیا کہ وہ بلا تاخیر سماج کے تمام طبقہ جات بشمول علاحدگی پسندوں کے ساتھ نتیجہ خیز مذاکرات شروع کر ے تا کہ تمام تنازعات کا قابل قبول حل تلاش کیا جا سکے اورجب تک ایسے جرآت مندانہ قدم نہیں اٹھائے جا سکتے تب تک مفاہمت کے امکانات مزید سکڑیں گے اور بے چینی میں اضافہ ہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ 2002الیکشن کے بعد پی ڈی پی کے سامنے سب سے بڑا چیلنج لوگوں کا اعتماد بحال کر کے ان میں جذبہ تحفظ پیدا کرنا تھااور حکومت تشکیل دینے کے بعد پی ڈی پی نے دوسری پارٹیوں کے برعکس اپنے اس ایجنڈہ کوعملی جامہ پہنانے کے لئے سر توڑ کوشش کی۔