خبریں

محبوبہ مفتی چوتھی مرتبہ پھرپی ڈی پی صدر منتخب

محبوبہ مفتی چوتھی مرتبہ پھرپی ڈی پی صدر منتخب

محبوبہ مفتی مسلسل چوتھی مرتبہ بلامقابلہ پیپلز ڈیمو کریٹک پارٹی کی صدر منتخب کر لی گئی ہیں۔ہرتین برس کے بعد منعقد ہونے والے پارٹی صدار تی انتخابات ہفتہ کے روز یہاں پارٹی دفتر گاندھی نگر میں منعقد ہوئے جس میں حالیہ انتخابات میں حصہ لینے والے تمام امیدواروں، 28منتخب اراکین اسمبلی، پارٹی کے اراکین قانون ساز کونسل ، سابقہ ا راکین قانون سازیہ، پارٹی ضلع صدور، زونل صدور، صوبائی اکائی کے لیڈران اور ریاستی سطح کے عہدہداران ، پی ڈی پی یوتھ لیڈران کے علاوہ درجنوں سنیئرلیڈران نے شرکت کی۔ ایوان صدارت میں پی ڈی پی سرپرست مفتی محمد سعید، پارٹی صدر محبوبہ مفتی ، نائب صدر سردار رنگیل سنگھ، رکن پارلیمان مظفر حسین بیگ، طارق حمید قرہ، وکرمادیتہ، وید مہاجن اور عبدالرحمن ویری موجود تھی۔ سابق ایم ایل سی وید مہاجن کو آبزرور بنایاگیاتھاجبکہ الیکشن کمیٹی کے چیئرمین عبدالرحمن ویری تھے۔ مظفر حسین بیگ، طارق حمید قرہ، سردار رنگیل سنگھ، وکرمادتیہ نے محبوبہ مفتی کو دوبارہ صدر منتخب کرنے کی تحریک پیش کی جس کے بعد میں موجود تمام ڈیلی گیٹس نے زبانی ووٹوں سے محبوبہ مفتی کو بلامقابلہ صدر منتخب کر لیا۔ الیکشن کمیٹی چیئرمین عبدلرحمن ویری نے صدارتی انتخابات کے نتائج کا علان کرنے کے ساتھ ہی کہا کہ پی ڈی پی کی تمام سطح کی اکائیاں تحلیل کر دی گئی ہے اور اب ریاستی، صوبائی، ضلع وزونل اکائیاں از سرنوتشکیل دی جائیں گی۔انتخابات کے بعد تمام پارٹی لیڈران نے صدر موصوفہ کو ہار پہنایا اور گلدستے پیش کر کے مبارک باد پیش کی۔ اپنے خطاب میں محبوبہ مفتی نے تمام پارٹی لیڈران، عہداداران کاشکریہ ادا کرتے ہوئے یقین دلایاکہ وہ پارٹی کی مضبوطی کے لئے محنت ولگن سے کام کریں گی۔ انہوں نے کہاکہ وہ اپنے والد  کی اعتماد اور اعتبار کے ساتھ کبھی بھی سمجھوتہ نہیں کریں گی۔ حالیہ انتخابات میں ناکام رہنے والے امیدواروں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے موصوفہ نے یقین دلایاکہ ہر ایک کا خیال رکھاجائے گا، وقت آنے پر انہیں ترجیح دی جائے گی اور طاقت بخشی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ اتنے برس گذر جانے تک پارٹی ورکروں  کیلئے کچھ نہیں کیا جا سکا ہے اور اب اگر حکومت سازی کا موقع ملا تو سب کے ساتھ انصاف ہوگا اور قابلیت، اہلیت ، صلاحیت کی بنا پر ہر ایک کو اس کا جائز مقام دیاجائے گا۔ اس موقعہ پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے مظفر حسین بیگ نے انہیں اس بات کا اعزاف حاصل ہے کہ 2004میں انہوں نے ہی محبوبہ مفتی کو صدر منتخب کرنے کی قرار داد پیش کی تھی۔ انہوں نے کہاکہ محبوبہ مفتی نے پی ڈی پی کے لئے بہت قربانیاں پیش کی ہیں۔ 1996، جب کشمیر میں حالات بہت زیادہ خراب تھی، محبوبہ مفتی نے اپنی دو بیٹوں کو چھوڑ کر میدان سیاست میں قدم رکھا اور محنت ولگن، تندہی سے کام کر کے پارٹی کو اس مقام تک پہنچانے میں اپنا کردار نبھایا۔واضح رہے کہ محبوبہ مفتی کو پہلی مرتبہ 2004میں پارٹی کا بلامقابلہ صدر منتخب کیا گیا تھا۔