خبریں

مرسی کی برطرفی جمہوریت پرحملہ ہے

ایران کی مسلح افواج کے سپریم کمانڈر جنرل حسن فیروزآبادی نے مصر میں ڈاکٹر محمد مرسی کی فوجی بغاوت کے ذریعے صدارت سے برطرفی کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔ جنرل فیروز آبادی نے کہا کہ محمد مرسی عوام کے بھاری مینڈیٹ سے صدر منتخب ہوئے۔ فوج نے انہیں معزول کرکے ملک میں جمہوریت پر براہ راست حملہ کیا ہے۔خبر رساں ایجنسی”دفاع المقدس” کو ایک انٹرویو میں ایرانی فوج کے سربراہ نے اپنے مصری پیٹی بھائیوں کو مشورہ دیا کہ وہ سیاسی امور میں مداخلت سے اجتناب کریں۔ ایک سوال کے جواب میں جنرل فیروز آبادی نے کہا کہ مصر میں خون ریزی کے حالیہ افسوسناک واقعات جمہوریت پر شب خون مارنے کا نتیجہ ہیں۔ مصری مسلح افواج کو اب اندازہ ہونا چاہیے کہ ان سے کتنی بڑی غلطی سرزد ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میرا خیال ہے کہ مصر کی مسلح افواج کا ملک کے منتخب صدر کو تمام معاملات کو درست کرنے کے لیے اڑتالیس گھنٹے کا الٹی میٹم دینا عقل سلیم اور انقلابی روایات کے منافی اقدام تھا۔ ڈاکٹر محمد مرسی کو عوام نے ووٹ کے ذریعے اپنا صدر چنا تھا اور وہی ملک میں جمہوری عمل کو آگے بڑھانے کے ذمہ دار تھے۔ جنرل فیروز آبادی نے معزول صدرکو حراست میں رکھے جانے کی بھی شدید مذمت کی۔ ان کے بقول ڈاکٹر محمد مرسی کی حکومت پر شب خون مصری فوج کی پہلی غلطی تھی۔ اس کے بعد صدر محمد مرسی کو حراست میں لینا دوسری بڑی غلطی ہے۔ مجھے امید ہے کہ مصری فوج کو اپنی غلطی کا احساس جلد ہوگا اور وہ سیاسی امورمیں مداخلت سے کنارہ کشی اختیار کرلے گی.