مضامین

وادی کے کئی علاقوں میں خوفناک گرینیڈ دھماکے

جنوبی کشمیر میں فورسز پر حملے اور ہتھیارچھینے کی کوششوں میں آئی تیزی کے بیچ پلوامہ میں سی آر پی ایف کی ایک گاڑی پر فائرنگ کی گئی ،تاہم اس حملے میں کسی کے ہلاک یا زخمی ہونے کی کوئی اطلاع نہیں ہے ۔ادھر کھنہ بل اننت ناگ میں گرینیڈ کے ایک دھماکے میں5فورسز اہلکار اور عام شہری زخمی ہوا جبکہ ترال میں پی ڈی پی کے ممبر اسمبلی کی رہاش گاہ پر گرینیڈ حملہ کیا گیا ۔
پلوامہ میں جمعہ کی صبح اُس وقت خوف ودہشت کی لہر دوڑ گئی ،جب یہاں اچانک گولیاں چلنے کی آوازیں سنی گئیں ۔ذرائع نے بتایا کہ سی آر پی ایف کی کچھ گاڑیاں قصبہ سے جارہی تھی ،جس دوران عید گاہ کراسنگ کے نزدیک اِ ن پر فائرنگ کی گئی ۔ معلوم ہوا ہے کہ مذکورہ گشتی پارٹی 183بٹالین سی آر پی ایف سے وابستہ تھی ۔ایس ایس پی پلوامہ محمد اسلم چودھری نے بتایا کہ سی آر پی ایف گاڑی کے نزدیک چند گولیاں چلنے کی آوازیں سنی گئیں۔انہوں نے کہا کہ اس فائرنگ واقعہ میں کوئی ہلاک یا زخمی نہیں ہوا۔ادھر فائرنگ کے فوراً بعد علاقے کا محاصرہ کیا گیا اور حملہ آؤروں کی تلاش شروع کردی گئی ۔اس سے قبل گولیاں چلنے کی آوازیں سننے کے ساتھ قصبہ میں خوف ودہشت کی لہر دوڑ گئی ،لوگ محفوظ مقامات کی جانب بھاگ گئے جبکہ کچھ دیر کیلئے یہاں معمول کی سرگرمیاں متاثر ہوئیں ۔تاہم بعد ازاں معمول کی زندگی بحال ہوگئی۔اس دوران کھنہ بل اننت ناگ میں اُس وقت افراتفری اور خوف وہراس کی لہر دوڑ گئی جب یہاں نامعلوم افراد نے ایک گرینیڈ داغا جو زوردار دھماکے سے پھٹ گیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ مذکورہ ناکہ پارٹی کو نشانہ بناتے ہوئے گرینیڈ داغا جو فورسز گاڑی کے نزدیک گر زوردار دھماکے سے پھٹ گیا۔دھماکے نتیجے میں5فورسز اہلکار اور ایک راہگیر زخمی ہوا ۔ بتایا جاتا ہے کہ خوفناک دھماکے نتیجے میں کھنہ بل اور اسکے گرد ونواح میں افراتفری پھیل گئی جبکہ خوف ودہشت کے عالم میں لوگ محفوظ مقامات کی طرف بھاگنے لگے ۔ادھر آہنی ریزوں کی زد میں زخمی ہوئے فورسز اہلکاروں اور عام راہ گیر کو علاج ومعالجہ کی خاطر ضلع اسپتال اننت ناگ پہنچایا گیا ۔زخمیوں فورسز اہلکاروں میں 4سی آر پی ایف اہلکار اور ایک پولیس اہلکار شامل ہے ۔زخمی اہلکاروں کی شناخت راویندر سنگھ ساکنہ اتر کھنڈ ،محمد سراج ،ویر سنگھ ساکنان اتر پردیشن اور ونود کمار کے بطور ہوئی جبکہ زخمی پولیس اہلکار اور عام راہ گیر کی شناخت عبدالمجید ساکنہ لار کی پورہ اننت ناگ اور عبدالرشید ساکنہ ترال کے بطور ہوئی ۔گرینیڈ دھماکہ انجام دینے کے بعد حملہ آؤر فرار ہونے میں کامیاب ہوئے ۔دھماکے کے فوراً بعد پولیس وفورسز اہلکاروں نے پورے علاقے کو محاصرے میں لیکر حملہ آؤروں کی تلاش شروع کردی ۔معلوم ہوا ہے کہ افراتفری کے عالم میں کھنہ بل میں معمول کی سرگرمیاں قریب ایک گھنٹے تک متاثر ہو رہ گئیں جبکہ سرینگر ،جموں شاہراہ پر بھی ٹریفک کی روانی متاثر ہوئی ۔اس دوران نامعلوم افراد نے پی ڈی پی کے ایم ایل اے ترال مشتاق شاہ کی رہائش گاہ پر گرینیڈ داغا گیا ،جو گھر کے احاطے میں زوردار دھماکے سے پھٹ گیا ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ ممبر اسمبلی اُس وقت گھر میں موجود نہیں تھے جب یہ دھماکہ ہوا۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ بعد دوپہر نامعلوم افراد نے مشتا ق شاہ کی رہائش گاہ اُڑانے کی غرض سے گرینیڈ پھینکا ،جو احاطے میں پھٹ گیا ۔تاہم اس دھماکے میں کوئی زخمی یا ہلاک نہیں ہوا ۔یاد رہے کہ گزشتہ روز کولگام میں منی سیکریٹریٹ کے باہر کلہاڑی بردار حملہ آؤر وں نے سی آی پی ایف اہلکار پر جان لیوا حملہ کیا ،جسکے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوا۔تاہم حملہ آؤر بندو ق چھینے میں ناکام رہے۔ادھر جنوبی کشمیر کے مختلف علاقوں میں بڑھتے جنگجویانہ سرگرمیوں کے پیش نظر سیکورٹی کو ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے اور کسی بھی امکانی گڑ بڑ سے نمٹنے کیلئے پولیس اور سیکورٹی فورسز کو چوکس رہنے کی ہدایات دی گئی ہے۔ جنوبی کشمیرکے علاقوں میں جنگجویانہ سرگرمیوں میں اضافہ ہونے کے بعد وادی میں سیکورٹی کے انتہائی سخت اقدامات کئے جا رہے ہیں یہاں تک کہ سرحدی علاقوں میں بھی گشت تیز کر دیا جا رہا ہے۔ذرائع کے مطابق گزشتہ کئی دنوں کے دوران جنوبی کشمیر کے چاروں اضلاع میں پیش آئے جنگجویانہ حملوں کے پیش اننت ناگ ،پلوامہ ،کولگام اور شوپیان میں فائرنگ اور پے درپے گرینیڈ دھماکوں کے باعث فوج اور سیکورٹی فورسز کو متحرک کردیا گیا ہے،جبکہ ممکنہ مزیدحملوں کو روکنے کیلئے سرینگر ،جموں شاہراہ پر اضافی دستوں کی تعیناتی عمل میں لائی گئی ۔ مزید حملوں کے پیش نظر فورسز اہلکاروں کو متحرک رہنے کی ہدایات دی گئی ہے اور حساس مقامات پر اضافی فورسز بھی تعینات کی جا رہی ہے۔