خبریں

کشمیری طابعلموں کو گزند پہنچی تو سنگین نتائج برآمد ہوں گے

کشمیری طابعلموں کو گزند پہنچی تو سنگین نتائج برآمد ہوں گے

حریت کانفرنس (گ)نے انجینئرنگ اینڈٹیکنالوجی کالج جموں میں کشمیری طابعلموں پر حملہ کرنے، انہیں زخمی کرنے اور ’’بھارت ماتا کی جے‘‘ کا نعرہ لگانے پر مجبور کرنے کے فرقہ پرست غنڈوں کی کارستانی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ کشمیری طالبعلموں کو تحفظ فراہم نہیں کیا گیا اور انہیں کوئی گزند پہنچی تو اس کے سنگین نتائج برآمد ہوں گے، جن کی تمام تر ذمہ داری ریاستی سرکار پر عائد ہوگی۔ حریت نے انجینئرنگ کالج جموں میں پولیس تعینات رکھنے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اس حملے کے پسِ پردہ آر ایس ایس اور بی جے پی کے لوگ ہیں اور انہوں نے وادی سے تعلق رکھنے والے طالب علموں کو سخت خوف زدہ کردیا ہے اور وہ انہیں کسی نہ کسی بہانے نقصان پہنچانے کے درپے ہیں۔ بیان میں حریت ترجمان نے کہا کہ سنگھ پریوار کے لوگ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت جموں کشمیر میں فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا کرنے کے لیے پرتول رہے ہیں اور اس کے لیے معصوم طالعلموں کو ایندھن (Fuel)کے طور پر استعمال کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ ترجمان نے طالبعلموں کو مخاطب کیا کہ یہ فرقہ پرست عناصر کسی بھی طور ان کے خیرخواہ نہیں ہیں اور وہ اپنے سیاسی مقاصد کے لیے ان کے تعلیمی کیرئیر کو مخدوش بنارہے ہیں۔ طالب علموں کو ان جنونی لوگوں کے جھانسے میں نہیں آنا چاہیے اور انہیں اپنی تعلیم پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے۔ ترجمان نے البتہ کہا کہ وادی سے تعلق رکھنے والے طالب علموں کو جموں میں ہراساں کرنے جیسی غنڈہ گردی کو کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کیا جائے گا اور کسی بچے کا بال بھی بیکا ہوا تو پوری ریاست میں آگ لگ جائے گی۔