مضامین کالم کی خبریں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

24 Jul 2021 کو شائع کیا گیا

رشید پروینؔ سوپور
(قسط: ۵۶)

اقتدار اور طاقت وقوت ، تخت شاہی ،کے لئے مسلسل انتشار اور اضطراب کا تاریخ میں پایا جانا کوئی انہونی بات نہیں ، اس طرح کشمیر کی صوبیداری اور نائب صوبیداری پر بھی کشمکش اور چال بازیاں لازم و ملزوم بنتی ہیں ،، عنایت خان اپنے بیٹے کے ساتھ راہ فرار اختیار تو کرگیا لیکن گوجر علاقے میں بمبوقبیلہ کے لوگ اس کے ارد گرد جمع ہوگئے ، جو ایک بار پھر علاقہ کامراج میں داخل ہوئے اور یہاں لوٹ مار مچانے لگے ، سرینگر میں ابوالبرکات راج کر رہا تھا ، آخر دونوں میں صلح مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

17 Jul 2021 کو شائع کیا گیا

رشید پروینؔ سوپور
(قسط: ۵۵)
عنا یت اللہ خان کے بعد ۱۷۲۵؁ء میںعقیدت خان نے کشمیر کی صوبیداری سنبھالی اور اس نے پھر ایک بار ابو البرکات خان کو اپنا نائب مقرر کیا ،لیکن دوسال کے بعد ہی بادشاہ نے نائب اور صوبیدار دونوں کو معزول کیا ، اور آغر خان نے صوبیداری کا منصب پایا ، آغر خان نے چھوٹی سی مدت تک عدل و انصاف سے کام چلایا لیکن بہت جلد ہی یکسر بدل گیا اور رعایا پر ظلم و جبر کے پہاڈ توڈنے میں کوئی کسر نہیں کی ، ابولبر کات خان ابھی کشمیر میں موجود تھا اس نے مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

10 Jul 2021 کو شائع کیا گیا

قسط: ۵۴)
اگر چہ مجھے ہندوستان کی تاریخ آپ تک پہنچانے کا کوئی ارادہ نہیں پھر بھی ان بادشاہوں کا مختصر تذکرہ لازمی ہو جاتا ہے جنہوں نے ملک کشمیر میں اپنے صوبیدار بھیج دئے اور جنہوں نے کسی نہ طرح ہندوستان مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

04 Jul 2021 کو شائع کیا گیا

(قسط: ۵۳)
اورنگ زیب عالمگیر کی وفات کے بعد ان کے بیٹوں میں تاج و تخت کے لئے لڑائی چھڑنا ناگزیر تھا ، کیونکہ اگر سارے معاملات ہی عقل کی بنیاد پر طئے ہونے لگیں تو پھر ’’ مقدر ‘‘کس چیز کا نام ہے ، اورنگ زیب کی مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔۔ وزیر اعظم کا کل جماعتی اجلاس
’’کچھ نہ سمجھے خدا کرے کوئی‘‘

26 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

۲۲مہینوں کے بعد وزیر اعظم ہند نے کشمیر پر ایک کل جماعتی کانفرنس منعقد کی جس کا شور اور زور وسط جون سے ہی میڈیا پر چھایا ہوا تھااور کشمیر کے وہ سب مینسٹریم لیڈراں و پارٹیاں سنا ہے کہ اپنے اپنے ایوانوں میں جشن چراغاں کئے مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

26 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

(قسط: ۵۲)
فاضل خان کے بہتر دور کے بعد ابراہیم خان تیسری مرتبہ صوبیدار ہوکر کشمیر وارد ہوئے ، سابقہ کو تاہیوں اور ناقص کارکردگی کے خلاف گڈ گوؤرنس کی شروعات کی ، ۔شیعہ سنی دونوں کا خیال رکھا مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

19 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

(قسط: ۵۱)
مغل بادشاہوں میں چار بادشاہوں کو شہنشاہوں کے لقب سے یاد کیا جاتا ہے ان میں محمد محی الدین او رنگ زیب عالمگیر ان سب میں اول نمبر پر نظر آتا ہے ، یہ شاہجہان اور ممتاز کا تیسرا بیٹا تھا اور اپنے بچپن سے اس کی طبیعت میں جاہ جلال اور عالی دماغی کے آثار پائے جاتے تھے ، کم گو اور ایک بہادر جنگجو کے علاوہ ایک بہترین ایڈمنسٹریٹر اور سیاسی شطرنج کی بساط کو بہت ہی اچھی طرح سمجھتا تھا ۔ بلا خوف و خطر اہم اور غیر متوقع فیصلے کرنے میں کوئی دیر نہیں کرتا تھا ، مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

12 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

(قسط: ۵۰)
’’سروری زیبا فقط اس ذات بے ہمتا کو ہے ‘‘ جس کے فضل و کرم سے یہ سلسلہ جاری ہے اور میری امیدوںاور توقعات سے بہت زیادہ مقبولیت ا ور پزیرائی کا حامل ہوچکا ہے ، یہ اس سیریل کی پچاسویں قسط ہے جس کا مطلب ہے گولڈن جوبلی قسط،، ان تمام اخبارات کے ایڈیٹروں اور سٹاف کا شکریہ جو ان قسطوں کو سجاسنوارکر اپنے اخبارات کی زینت بنا رہے ہیں۔ میں کئی روز تک یہ سوچتا رہا کہ یہ گولڈن جوبلی نمبر کس کے نام کردوں اور اس میں کیا لکھوں ،، کشمیر کی کہانی مزیدپڑھیں

کشمیر ۔۔ تیری میری کہانی ہے

05 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

قسط: ۴۹)
نورالدین محمد سلیم جہانگیر کی وفات کے ساتھ ہی وہ کشمکش سامنے آگئی جو شاہزادوں کے درمیان تخت حاصل کرنے کے لئے پہلے ہی سے جاری تھی ، نور جہاں نے جانشینی کے جھگڑے پیدا کرنے مزیدپڑھیں

مفتی فیض الوحید

05 Jun 2021 کو شائع کیا گیا

مفتی فیض الوحیدجموں و کشمیر سے تعلق رکھنے والے ایک عالم، فقیہ اور مفسر قرآن تھے۔ انہوں نے قرآن کا گوجری زبان مزیدپڑھیں